جمعہ, فروری 17, 2017

رب ہے

ملحدوں کےلئے۔۔۔۔۔۔۔
شکم مادر میں دو جڑواں بچے تھے ۔
ایک دوسرے سے پوچھتا ہے: تم بعد از پیدائش حیات پر یقین رکھتے ہو؟؟
دوسرا جواب دیتا ہے: "یقیناُ، کچھ تو ہوگا پیدائش کے بعد۔ شاید ہم یہاں تیار ہورہے ہیں اس دوسری حیات کےلئے۔ جو بعد میں آوے گی"۔     " ایک دم بکواس" پہلا کہتا ہے۔ "بعد از پیدائش کوئی حیات نہیں ہے۔ کس طرح کی زندگی ہوسکتی ہے وہ   والی؟"
دوسرا جواب دیتا ہے: " مجھے نہیں معلوم، مگر یہاں سے زیادہ روشنی ہوگی، شاید ہم چل بھی سکیں گے اپنی ٹانگوں کے ساتھ اور اپنے منہ کے ساتھ کھا بھی سکیں۔ شاید ہماری اور حسیں بھی ہوں جو ہم اب نہیں سمجھ پا رہے"۔
پہلا اعتراض کرتا ہے: "یہ تو بلکل ہی بونگی ہے۔ چلنا ناممکن ہے۔ اور منہ کے ساتھ کھانا؟ ذلالت۔ ناف کے ذریعے ہمیں سب مل تو رہا ہے جس کی ہمیں ضرورت ہے۔۔۔ اور پھریہ ناف  بہت چھوٹی ہے۔ بعد از پیدائش حیات کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔"
دوسرا مسلسل اپنی بات پر اڑا رہتا ہے: بہرحال، مجھے یقین ہے کہ کچھ تو ہے اور شاید جو یہاں ہے اس سے مختلف ہو۔ شاید لوگوں کو اس ناف کی ضرورت ہی  نہ ہوتی ہو"۔
پہلا پھر سے اعتراض کرتا ہے: "سب بکواس، اور باوجودیکہ، بلفرض اگر کوئی حیات بعد از پیدائش ہے، تو پھر ادھر سے کبھی کوئی واپس کیوں نہیں آیا؟؟ پیدائش حیات کا اختتام ہے اور بعد از پیدائش کچھ بھی نہیں ہے سوائے غیرشفافیت، خاموشی اور فراموشی کے۔ پیدائش ہمیں کسی طرف نہیں لے کے جائے گی"۔
"اہو، مجھے یہ تو نہیں معلوم" دوسرا کہتا ہے "لیکن یقینا ہم ماں سے ملیں گے اور وہ ہماری دیکھ بھال کرے گی، ہمارا خیال رکھے گی"۔
پہلا گویا ہوتا ہے: "ماں؟" تم ماں پر یقین رکھتے ہو؟  اہو، یہ تو بکواس ہے بلکل ہی، اگر ماں بلفرض ہے، تو پھر، اس وقت کہاں ہے؟"
دوسرا جواب دیتا ہے: " وہ ہمارے ارد گرد ہے۔ ہم اسکے حصار میں ہیں۔ ہم اسکے اندر ہیں۔ اور اسکی وجہ سے ہی تو زندہ ہیں۔ اسکے بغیر تو اس دنیا کا وجود ہی ممکن نہیں ہے اور نہ ہی اسکی بقا ممکن ہے"۔
پہلا جواب دیتا ہے: توپھر، میں تو اسےنہیں   دیکھ  سکتا،  پس ثابت ہوا کہ ، اصولی طور پر اسکا کوئی وجود نہیں ہے"۔
اور پھر دوسرا  گویا ہوتا ہے: " کبھی کبار، جب خاموشی ہوتی ہے،   اگر سچی میں سننے کی کوشش کرو تو، اسکی موجودگی محسوس کی جاسکتی ہے اور اسکی آواز وہاںاوپر سے سنی جاسکتی ہے"۔
اس طور پر ایک ہنگارین لکھاری سمجھاتا ہے کہ "رب" ہے۔






مکمل تحریر  »

سوموار, جون 06, 2016

روزے کی تیاریاں

اہو ہو کل روزہ پینڑاں ہے بابیو۔
ہیں جی، چل بچہ کچھ سامان ہی لے آئیں، 
دیکھ گھر میں کیا کیا ہے، کیا کیا لانا ہے
اچھا اور کچھ؟؟
پر دیکھنا روزہ بہت لمبا ہے، اوپر جون کا مہینہ بھی ہے
 
گرمی تو ہوگئی ہی ہوگی۔
 
جوس، نمبو، چار کلو چینی، شربت بھی تو پئیں گے
فروٹ، بابیو،
 
سارے فروٹ لانا، جو تازے ہیں وہ والے
ہاں اور کھجوریں بھی، وہ موٹی آلی، آچھا جی
اچار، الائیچی ہاں الائیچی اور دار چینی بھی، ان کا قہوہ پینے سے پیاس کم لگتی ہے۔
 
سالن اچھا ہو، تاکہ دن کو بھوک نہ لگے۔
 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ کل کا سین تھا۔
 
آج پاکستان سے نسخے آرہے ہیں
 
پھکیوں اور معجونوں کے، قلاقند کے،
 
دیسی گھی اور مکھن
سرد مشروبات کا زیادہ سے زیادہ استعمال۔
 
تاکہ دن کو بھوک نہ لگے پیاس نہ لگے۔
 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ آج کا سین ہے۔
 
اور میں سوچ رہا تھا،
 
کہ اگر رمضان کے آنے کا مقصد بھوک اور پیاس سے بچنا ہی ہے تو پھر بندہ آرام سے دن کو کھانا کھائے اور پانی پئے۔ نہ رکھے روزے، آخر اللہ کو بھی تو ہماری بھوک اور پیاس سے کچھ لینا دینا نہیں ہے،
 
وہ تو نیت دیکھتا ہے، وہ تو نیاز مندی دیکھتا ہے۔
 
مقصد تو تھا، کہ تو بھوک محسوس کر، پیاس محسوس کر، لڑائی جھگڑا ترک کردے، مسکین ہوجا۔
 
مسکین کی حالت کو محسوس کر، اور اسکی فکر کر۔
 
پر نہ ہم کو تو اتنا سوچنا ہی نہیں ہے۔
 اچھا آپ ہی بتاؤ روزے میں بھوک اور پیاس و کمزوری سے بچنے کے کچھ نسخے

سوری، یاد کرانا تھا، کہ رمضان میں عبادت ہوتی ہے،  نماز قرآن اور معافی  تلافی۔ دوسروں کا خیال رکھنا، 
نہ کہ پھاوے ہوئے پھرنا ۔ 





مکمل تحریر  »

جمعرات, دسمبر 04, 2014

تاریخ انسانیت اور کفار

پوری تاریخ انسانیت چاہے وہ اسلام ہو، قبل از اسلام ہویا بعد از اسلام،  اگر واہ  واہ  کئے بغیر  اسکے بغور جائزہ لیں تو  ہم کہہ سکتے ہیں کہ ہمارے لوگ ایسے بگڑے ہوئے ہیں کہ انکو کچھ نہ کچھ جھگڑا کرنے کو مل ہی جاتا ہے،
پہلے زمانے میں سنا ہے کہ لوگ لڑا کرتے تھے، نعرہ نیکی اور بدی  کےنام پر جنگ جاری رہے گی
لوگ جھگڑ رہے تھے، پانی ، بکری، کھوتی، کھجور، ہر شئے پر جھگڑا۔ جنگ جاری رہی

پھر اسلام آگیا اور یار لوگوں نے نعرہ بدلی کرلیا،   اسلام اور کفر کے درمیان جنگ جاری رہے گی۔ باوجود اسکے کہ اسلام سارے کا سارے امن کا درس دیتا رہا،جب بھی موقع ملتا آرام سے رہنے کی کوشش کرتے مگر پھر بھی چاہتے ہوئے نہ چاہتے ہوئے جنگ جاری رہی
پھر اسلام میں بھی خارجی آگئے اورنعرہ تبدیل،    خارجیوں کےخلاف جنگ جاری رہے گی۔  
پھر مسلمان ترقی کرکے سنی اور شعیہ ہوگئے۔  نعرہ لگا، شعیہ سنی کے درمیان جنگ جاری رہے گی۔ انہوں نے انکو مارا، انہوں نے انکو مارا، اور جنگ جاری ہے۔  جسکو موقع لگتا ہے وہ دوسرے کی کٹ اور کُٹ لگانے سے بلکل نہیں چوکتا۔
پاکستان شریف بن گیا، قلعہ اسلام کا۔
پہلے تو بنگالی اور غیر بنگالی ایک دوسرے کے لہو کے پیاسے ہوئے۔ فائدہ اٹھایا انڈیا نے جنرل نیازی نے 16 دسمبر 1971 کو ہتھیار ڈال دیئے۔

اسکے بعد قادیانی الگ کرکے واجب القتل قرار پائے۔
اب شعیہ سنی سے ترقی کرکے بریلوی دیوبندی ہوگئے اور آپس میں جھگڑرہے۔ فسادات کررہے۔  ایک کہتا ہے میں اسکو چھوڑوں گا نہیں،  دوسرے اسے تلاش کررہا ہوتاہے۔
اب قتال کی شکل تبدیل ہوگئی ہے، جس کا دل کرے وہ کسی پر بھی توہین رسالت کا الزام لگا دے اور پھر اسکی گردن ٹوکے سے الگ اور خون معاف۔  سارے مولوی ٹوکے بنے ہوئے۔

یہ بات بھی پرانی ہوگی، وقت گزر گیا۔ توہین صحابہ کا الزام لگا کر بھی آپ کسی کو ککڑکٹ لگا سکتے ہیں، یہ نسخہ بھی قدیم قرار پایا اب آپ کسی پیر صاحب کی توھین کے مرتکب قرار دیئے جاسکتے ہیں۔ حتٰیکہ آپ کو بادشاہ خان کی توہین کا مرتکب قرار دے کر بھی واصل جہنم کیا جاسکتا ہے۔

ان دنوں دو مہنگے مہنگے کرتوں والی سرکار آپس  میں گھتم گھتاہیں۔ اور ساری مسلکی پارٹیاں اپنے اپنے "وٹ"  نکال رہیں۔  بندہ جائے تو کدھر جائے، معافی مل سکتی ہے، معافی نہیں مل سکتی، کرلو جو کرنا،  کل ایک صاحب  کہہ رہے تھے کہ با ت دور تک جائے گی۔
بندہ پوچھے بھائی جان اگر لڑنا ہی ہے تو لڑو مگر کرتے تو سستے کرتے جاؤ۔

لڑمذہب کے نام پر رہے سب کے سب اور مذہب یہ کہتا ہے کہ " ملکر اللہ کی رسی کو مضبوطی سے تھام لو اور آپس میں تفرقہ مت کرو"۔ مگر اس طرف کس نے دھیان دینا ،

ویسے غزہ میں آج بھی دو میزائل مارکر ایک بڑی بلڈنگ گرادی دی گئی۔ جانے کتنے لوگ مرے ہونگے، ان میں مرد عورتیں، بچے، سب نہتے۔ یہ بھی یاد کروادوں کہ غزہ میں سارے مسلمان ہیں محصور اور مارنے والے یہودی، یہودی بھی نہیں زیونسٹ۔

کافرسب کو مسلمان کرکے اپنے   ”وٹ   نکالی جارہے "  اور مسلمان  ایک دوسرے کو  "کافر قرار دے کر اپنے وٹ نکالی جارہے"۔




مکمل تحریر  »

بدھ, جولائی 31, 2013

نیا اسلامی انقلاب، گانا بجانا

عبدلروف روفی کی غزل پر وہ بات کرے تو سنا ہے پھول جھڑتے ہیں کو سن کر یا رسول اللہ کہنے والے مولوی باؤ محمد حمید مرحوم کے عشق رسول کی ایک عام مثال تھی، ہم ہنستے تھے کہ مولوی یار یہ کسی اور چکر میں گا رہا ہے، مگر مولوی اپنے چکر میں یارسول اللہ کہہ کر ہاتھ چومتا ہوا ہے، آنکھوں کو لگاتا ہوا، بس سر سے اوپر بالوں تک لے جاتا، مولوی کی محبت اپنی جگہ پر اور غزل گانے والے کی نظر اپنی جگہ پر  لکھنے والے نہیں جہاں لگائی وہ تو علم نہیں کیوں کہ شاعر کا نام معلوم نہ ہوسکا، مگر ہم جہاں پر لگا رہے تھے وہ وہی تھی جہاں عموماُ ایسی غزلیں لگتی ہیں، ہماری غزل کا معشوق اور تھا اور مولوی جی کی کیفیت کہیں اور لے جارہی تھی، خیر بھلے آدمی تھے بھلی نباہ گئے اور جوانی میں ہی داغ مفارقت دے گئے، 

آج جانے کیوں مجھے مولوئ جی بہت یاد آرہے، جب اس بلاگ کو لکھنے بیٹھا تو لگا کہ مولوی جی خود ہی سامنے مجسم آگئے اور کہہ رہے، یار ڈاکٹر جی سانوں بھل ہی گئے ہو، کدی یاد ہی نہیں کیتا، اب یاد تو بندہ دنیا دار جو ہے وہ دنیا والوں کو ہی کرے گا، جن سے لین ہے اور دین بھی، مگر جو ادھر سے نکل لئے انکا معاملہ اللہ کے سپرد، کبھی موقعہ ملے فرصت ہوئی تو یاد کرلیا، اور کہہ دیا اللہ مغفرت کرے۔  

مولوی محمد حمید اپنے آپ کو باؤ حمید کہلوانا پسند کرتے اور میں انکو مولبی جی کہنے پر مصر، کبھی بہت لاڈ پیار ہوا تو مولانا کہ لیا یا پھر حضرت جی تو بس پھر حضرت جی اپنا ہاتھ چوم لیتے، حضرت جی اٹلی میں ہمارے اولین رفقاء میں شام رہے، پہلے  سال کی سردیاں جب ایک کمرے میں 14 بندے ہوتے اور اوپر سے 3 مہمان بھی تو میں اور مولبی جی نے ایک سنگل بیڈ پر سوکر ایک رضائی میں گزار دی، انکے پاؤں میرا سر اور میرا سر انکا پاؤں۔ 

سدقے شالا انہاں پردیسیاں تیں گلیاں دے ککھ جہناں تیں  پہارے۔ 

مولوی جی کوئی باقاعدہ مدرسے کے طالبعلم نہیں رہے مگر بس دین نے انکو اپنے اندر سمولیا اور وہ اسلام سے زیادہ صوفی ازم کی طرف نکل گئے، مطلب پنجگانہ نماز اور ورد وظیفہ، پیروں کی باتیں، اور ولیوں کے قصے، جو شروع ہوتے ایک بزرگ نے ایک مقام پر فرمایا، ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر کوئی اچھی بات ہی ہوتی، مولوی جی کی تعلیم عمومی مگر لگن پکی تھی،  ہم لوگ حوالہ مانگتے، مگر وہ اپنی بات پر پکے، بس جی جب لگن لگ گئی تو فیر لگ گئی، البتہ یہ قرآن اور حدیث کا حوالہ کم ہی ہوتا، مگر سادگی سے وہ اپنے رستے پر چلتے رہے، اور ہم اپنی لفنٹریوں پر، ہمارے حوالے اور دنیا داریاں اور انکے بغیر حوالے کی لگن اور سادگی، بس یہ درویشانہ عالم کہ کتنی باربحث ہوتی، زچ کرتے کہ مولوی تینوں ککھ پتا نہیں، مگر وہ ہنستے ہنستے نکل لیتے، سادیو ڈاکٹر جی تسیں نہیں سمجھو گے۔  البتہ ایک بات پکی تھی، مولوی جی میں کوئی شرعی عیب نہ تھا، باریش، یورپ میں بھی شلوار قمیض کہ بھئی مذہبی لباس ہے باوضو، نماز جہاں بھی وقت ہوگیا، پڑھ لینی نہیں تو موقع ڈھوندنا
 اللہ نے ان پر اپنا فضل رکھا اور دنیا کے معاملات وقت سے پہلے ہی سمیٹ کر مرحوم ہوگئے۔  اب تو شاید دو برس ہوگئے ہونگے، اللہ انکی مغفرت کرے اور انکو جنت الفردوس میں اعلٰی مقام عطا کرے۔ 

تب یہ پہلی غزل تھی نوے کی دہائی کے آخری برسوں کی بات ہے جب ہم مولوی کے ساتھ اس غزل پر جھگڑرہے ہوتے اور وہ اپنی کیفیت میں چلے جارہے، پھر اسکے بعد سنا کہ نعتیں باقاعدہ  غزل گوئی کی طرز پر گائی جانے لگیں، پھر قرآنی آیات کا گایا جانا بھی عام دیکھا گیا، پھر یہ بھی دیکھا گیا کہ یہ دکان چل نکلی ہے تو بہت سے گانے والوں نے نعتیں اور حمدیں گانا شروع کیں اور ہم نے انکو بہت برا بھلا کہا، مولبی لوگ تو فل تپے ہوئے ہوتے، پہلے غزل گو نعت پڑھنے والی طاہر سید تھی، فیر بس جیسے برسات میں کھنبیاں پھوٹتی ہیں ایسے غزل گو اپنی جون بدل کر نعتیے ہوگئے، بعئی ہمارے علم کے مطابق تو گانا اسلام میں شرعی طور پر منع کیا گیا، اور قرآن کو گاکر پڑھنے والوں پر لعنت کی گئی، تو فیر یہ اب جو چل رہا ہے، وہ کیا سین ہے۔ ؟؟؟ یہ سب اگر مولوی جی حیات ہوتے تو انکے ساتھ بحث ہونی تھی اور انہوں نےکہنا تھا سادیوں تہانوں نہیں پتا، چھڈو، انہاں نوں اپنا کم کرن دیو، تے تسیں اپنا کم کرو۔ 

تو ہم کون سا توپ لئے گھوم رہے انکے پیچھے، گائیں جی نعتیں گائیں حمدیں گائیں، ، قرآنی آیات گائیں اور ہم تو اپنا کام کررہے ہیں، پوری قوم اپنا کام کررہی ہے۔ 

مکمل تحریر  »

جمعرات, جولائی 25, 2013

خالد ابن ولید، مزارات اور شامی باغیوں کے حمائیتی

ملک شام کے ساتھ ہماری جان پہچان تب سے ہے جب سے ہوش سنبھالا، جب اردگرد دیکھنا شروع کیا اور جب پڑھنا شروع کیا، اسلام تاریخ کے جو بڑے نام ہیں اور جن کو ہم اپنا آئیڈیل مانتے ہیں، جن لوگوں کے نام سامنے آتے ہیں، انکی عظمت دل میں جاگ جاتی ہے، ان سے محبت کرنے کو دل کرتا ہے، ان میں سے ایک بڑا نام حضرت خالد بن ولید، رضی اللہ عنہ، سیف اللہ کا لقب پانے والے اس عظیم سپہ سالار کا ہے، جن کے بارے حضرت صدیق اکبر کا فرمان ہے کہ یہ اللہ کی وہ تلوار ہے جو نبی کریم صلی اللہ علی وآلہ وصلم نے نیام سے نکالی تو میں کیسے اسے نیام میں کردوں، پس پھر تاریخ نے قادسیہ کا معرکہ دیکھا جب مسلم افواج نے ایک کثیر تعداد میں دشمن کو ایسی شکست دی کہ وہ پھر سنبھل نہ سکا، حضرت خالد ابن ولید رضی اللہ نے خلافت کی طرف سے سپہ سالار نہ ہونے کے باوجود اپنی ذمہ داری نبھاتے ہوئے اسلامی لشکر کو جس خوبی اور فراخدلی سے سنبھالا وہ تاریخ میں اپنی مثال نہیں رکھتا، پھر دور عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ میں جب حضرت خالد ابن ولید رضی اللہ کو معطل کیا گیا تو آپ نے پھر نظم کی مثال قائم کی، پھر اسلامی فوج میں بغیر عہدہ کے لڑے۔ اور اللہ کی یہ تلوار کسی کافر کے ہاتھوں نیام میں نہین گئی اور آپ غازی رہے، اللہ پاک آپ کے درجات بلند کرے۔

حضرت کے زمانہ حیات میں ابھی تک فتنہ شیعہ نے سر نہ اٹھایا تھا اور وہ ایک نہایت غیر متنازعہ شخصیت کے طور پر اپنے خالق حقیقی سے جا ملے۔
آپ نے بازنطینی اور ساسانی حکومتوں کی ناس ماردی، اور یہ کہ آپ کے فتح کئے ہوئے علاقہ ابھی تک مسلمانوں کے پاس ہی ہیں، سیف اللہ ہونے کی ایک بڑی دلیل۔

امیر تمور جب حمس کے پاس سے گزرہ تو وہ بھی اس جنگجو کے احترام میں اس شہر کو تباہ کئے بغیر گزر گیا، ایک بہادر جرنیل دوسرے کی قدر جانتا ہے۔۔

شام میں موجود مزار بی بی زینب رضی اللہ عنہ بھی کسی بحث کا باعث نہیں بنا کبھی بھی نہیں بنا۔ یہ مزارات صدیوں سے مراکز تجلیات و مرجع خلائق ہیں
اب جی شام ملک میں خانہ جنگی لگی ہوئی ہے اس بارے پہلے تو خبریں تھیں کہ باغیوں کی اسرائیل مدد کررہا، پھر اس میں یورپ اور امریکہ کی مدد بھی ٹپک پڑی، اب کل امریکہ نے باقاعدہ باغیوں کی اعانت اور سپوٹ کا اعلان کردیا ہے، انجمن اقوام متحدہ امریکہ کی سلامتی کونسل نے بھی باغیوں کے ساتھ گفت وشیند شروع کردی، یہ آجکی واشنگٹن پوسٹ میں لکھا ہوا،۔۔

اب میں یہ سوال کرنے میں حق بجانب ہوں کہ، مملکت شام اس وقت بہت نازک حالات میں ہے، یہ مزار گرانے والے متنازعہ کام انکو کرنے ہوتے تو وہ پہلے کرتے جب سب کچھ انکے قابو میں تھا، اب تو انکےلئے اسطرح کا ہر قدم خودکشی کے مترادف ہے۔

اگر حکومت یہ کام نہیں کررہی تو پھر باغی کررہے ہیں، یہاں پر ایک اور سوال پیدا ہوتا ہے ک مسلمان تو ادھر ہمیشہ سے ہی ہیں، وہ تو مسجد پر حملہ نہیں کریں گے نہ ہی انہوں نے کیا ایسے ہی جیسے کسی ہندو کا مندر پر اور کسی عیسائی کا چرچ پر حملہ کرنا خارج از امکان ہے، میں نے اپنے انڈین دوست عبدالمالک صاحب سے بھی اس بات کی تصدیق کی ہے کہ کیا ہندوستان میں جہاں سب اقوام و مذاہب موجود ہیں، وہاں پر مندر پر کون حملہ کرے گا تو جواب ملا کہ ہندو تو نہیں ہوگا
مسجد پر حملہ کرنے والا کون ہوگا، تو جواب ملا کہ مسلمان کے علاوہ کوئی ہوگا
اسی طرح چرچ پر حملہ کرنے والا عیسائی کے علاوہ ہی کوئی ہوگا۔

تو برادران یہ جو مزارات پر حملے ہورہے ہیں یہ باغیوں کے غیرمسلم معاونین کی طرف سے ہورہے ہین، تاکہ عام مسلمان کے دل میں مملکت شام کے خلاف نفرت پیدا کیا جاسکے اور کل کو  جب سکوت شام ہوگا تو اس پر کوئی رونے والا نہیں ہوگا۔ مزارات پر حملے کرنے والے وہی ساسانی اور بازنطینی ہی تو نہیں ہیں جو آج اپنا بدلہ لے رہے ہیں سنا ہے کہ چلو تب تو کچھ نہ ہوسکا اب موقع ہاتھ آیا ہے تو حضرت کے مزار و منسوب مسجد سے ہی بدلہ لے لو۔ ورنہ اور کوئی کیوں ان جیسی شخصیت کے مزار پر حملہ کرنے کی جرآت کرسکتا ہے جب امیر تیمور جیسا لڑاکا اور سنگ دل بھی حضرت کے شہر سے پرے ہوکر اپنا راستہ تبدیل کرلیتا ہے۔ 

خیر مکرو، مکراللہ، وللہ خیرالماکرین

مکمل تحریر  »

اتوار, نومبر 11, 2012

ایک معجزہ قرآن کا


چونکہ ہم مسلمانوں کے گھر پیدا ہوئے ، لہذا جبری مسلمان قرار پائے۔  جبری یوں  کہ، پیدا ہوئے اور دادا جی نے کان میں اذان انڈیل دی۔ کہ چل بیٹا  ساری زندگی مولبیوں کو سنتا رہ، بولنے کے قابل ہوئے تو  انہوں نے کلمہ پڑھادیا ، مطلب پکا مسلمان،  اور ہم نہ جانتے ہوئے بھی   "کوئی معبود نہیں سوائے اللہ کے اور محمد اللہ   کے رسول  ہیں"۔  ہم کہتے رہتے اور دادا جی خوش ہوتے رہتے،  چلنے کے قابل ہوئے تو انہوں نے ایک ہاتھ میں اپنی لاٹھی لی  اور دوسرے میں میراہاتھ تھامے مسجد لےگئے۔   لو جی پکے مسلمان۔  پھر اسکول میں  بھیجنے سے پہلے مسجد   "قرآن " پڑھنے کو بھیج دیا۔  اور ہم حافظ جی کی طرح پورا قرآن پڑھ گئے بغیر سمجھے، پھر اسکول میں اسلامیات  کی کتاب   پر رٹا مارتے رہے، آیات اور احادیث  یاد کرتے رہے، تاریخی واقعات رٹتے رہے۔ یوں ہم  پکے مسلمان ہوگئے بلکہ کچھ کچھ حافظ جی بھی، کہ کچھ آیات زبانی یاد تھیں اور کئی کے ترجمے بھی۔  بلکہ ایک بار تو ریش مبارک بھی رکھ لی تھی۔ پھر  دادا جی نے جھاڑا  کہ " اتنی مسلمانی بھی اچھی نہیں"   ابھی میں ہوں ناں باریش گھر میں،   بس ایک میان میں دو تلواریں نہیں ہوسکتیں،   اور ہم نے دھاڑی منڈوادی، ویسے بھی کالج میں قاری صاحب  کہلوانا اچھا نہ لگتا تھا۔

پاکستان میں ہمارا  کل اسلام نماز جمعہ اور مولبی کی تقریر کے علاوہ کچھ نہ تھا۔ مطلب مسجد سے باہر اسلام کاکوئی کام نہیں ۔ قرآن صرف صبح پڑھ لینا کافی ہے۔ مطلب کلام پاک کی تلاوت۔   اور بس، اسکے معانی پر اور مفہوم پر کبھی غورکیا بھی نہیں، ویسے بھی بزرگوں سے یہی سنا کہ دین کے معاملات میں زیادہ غور نہیں کرنا چاہئے۔ البتہ  قرآن کے سارے معجزے ہمیں زبانی یاد ہیں، چاہے وہ یوسف ؑ  کو کنویں میں ڈالنا یا نکالنا ہوا ، یا ابراھیمؑ کی آگ کا واقعہ، یا پھر  موسیٰؑ کا  اور فرعون کا قصہ۔

اسکے علاوہ ہمیں قرآن میں سے سارے ورد وظیفے بھی یاد ہیں جو مختلف مواقعوں  پڑھنے ضروروی ہیں اور کماحقہ ان سے مستفید ہوا جاسکتا ہے۔اور ہمارا ایمان ہے کہ چاہے کوئی بھی مسئلہ ہو اسکا حل ادھر موجود ہے۔ اب ہمیں نہ ملے تو  ہماری کم علمی اور کم عقلی۔ ویسے یہ الگ بات ہے کہ ہماری پوری قوم کو اب تک مسائل کا حل نہیں مل سکا ، اسکا ثبوت   مسائل کی موجودگی ہے۔

کل شام کو ایک  کتابوں کی دکان میں  بہت عرصے بعد گھس گیا، پرانا شوق  پورا کیا ،  کتابی دیکھیں، کچھ نئی، کچھ وہی پرانی، سدا بہار،رومانس، تاریخ، سیاست، بچوں کے کارٹون ،   سیاحت، نفسیات ، جادو ٹونے ،  معالجات و صحت اور مذہب و ایمان،  اس ضمن میں جو بات میرے دل  میں گھس گئی کہ قرآن مجید کو سب سے اوپر والی شیلف میں رکھا گیا تھا۔ جبکہ دکان اٹالین ہے اور اس حصہ میں بائبل سے لیکر عیسائیت  پر بیسیوں  کتب پڑی تھیں ،  مگر حیرت کی بات کہ قرآن شریف کو سب سے اوپر رکھا گیا، گویا سب سےمقدس صحیفہ یہی ہے۔ اور سب سے اہم  بھی۔ مجھے تو یہ بھی قرآن کا ایک معجزہ لگا۔ اور ایمان تازہ ہوگیا۔

وللہ اعلم





مکمل تحریر  »

اتوار, اکتوبر 14, 2012

ہم بت پرست

بت پرستی تو خیر ہمیشہ سے ہی حضرت انسان  کے ساتھ رہی ہے،   بلکہ اس پر حاوی رہی، حتیٰ کہ قدیم تہذیبوں میں سے بھی جوکچھ ہمارے ہاتھ آرہا ، وہ صرف بت ہیں ہیں،  یونانی تہذیب جب عروج پر تھی تو انہوں نے اپنے ہر کام کےلئے "دیوتا    اور دیویاں "  مقرر کی ہوئی تھیں،  بارش کی دیوی، جنگ کی دیوی، فتح کی دیوی،  حتیٰ کہ دریا پارکرانے کےلئے ایک الگ سے دیوی رکھ چھوڑی تھی۔  اسی طرح مصری ، رومن اور بابل کی تہذیبوں میں بھی کچھ ایسے ہی رہا۔  کہ  کسی جگہ دیوی جی کا چلن رہا تو کسی جگہ بادشاہ کا بت بنا کر  سامنے کھڑا کرلیتے اور حاضری کرواتے۔ بت  بنانے کو ہر میٹیریل حسب توفیق استعمالا گیا،  پختہ مٹی سے لیکر، اینٹ، روڑا،  پتھر، لکڑی،  سونا چاندی،لوہا اورہیرے تک سے پتھر تراشے گئے۔  بلکہ بامیان میں تو پورے کے پورے پہاڑ کو کھود کر بت بنا دیا گیا۔ پھر طالبان نے اسکا  " رام نام ستے "  کی اور دنیانے خوب چیخیں ماریں۔



 ہمارے اردگرد  تو خیر سے "ات "ہی مچی ہوئی تھی ،  گندھارا  کی تہذیب سے لیکر ہندومت اور جین مت تک کے مذاہب میں آج بھی دیوی دیوتاؤں کے نام کے بت بنا ئے جاتے ہیں،  یہودی مذہب میں بھی کچھ ایسا ہی چلن رہا کہ ادھر بت تو کم بنائےگئے مگر انہوں نے فوٹو بنا کر انکی پرستش البتہ خو ب کی۔ اور لمبی لمبی برکتیں حاصل کیں یا کوشش  حصول کرتے رہے۔

 ہندو مذہب میں تو خیر سے اب  بھی باندر سے لیکر ہاتھی تک کے بت موجود ہیں  اور انکی پرستش دھڑا دھڑ جاری ہے، سنا ہے  کہ "عضو تناسل " کا بھی کہیں بت بنا کر رکھ چھوڑا ، اور بیبیاں ادھر بھی اولاد کے حصول کےلئے چڑھاوا چڑھا کر منت مانگتی پھرتی ہیں۔  عیسائی مذہب میں بھی بھی الٹے سیدھے تو نہیں مگر انسانی شکل کے بت کثیر تعداد میں نظر آتے ہیں،  نومولود حضرت عیسٰی  ؑ اور نیم عریاں  مریم ؑ کے مجسموں سے تو برکت کا حصول ہو ہی رہا ہے ، مگر کہیں انکو صلیب پر ٹنگا ہوا دکھایا گیا،   جو آپ کو ہر چرچ میں بتعداد کثیر ملیں گے، ان کے علاوہ بھی ہر محلے میں سینٹ کا بت نصب ہے۔


اسلام ایک واحد مذہب  ہے اور اسلامی معاشرہ  زمین  پر واحد معاشرہ ہے جس میں بت پرستی کو سختی سے ممنوع قرار دیا  گیا،  خیر سارے ہی انبیاء کرام نے بت شکنی کی،  کچھ بتوں کا تو باقاعدہ ذکر ہوا   قرآن شریف میں ، جن میں  حضرت ابراہیم علیٰہ سلام کے بت توڑ کر کلہاڑا بڑے بت کے کندھے پر رکھ دینے کا  ذکر ہوا۔  پھر بچھڑے کے سونے کے بت کا ذکر ہوا جو حضرت موسٰی ؑ  کی قوم نے انکے کوہ طور پر جانے کے بعد بنا لیا۔  پھر خانہ کعبہ میں موجود بتوں کا بھی ذکر ہوا، جو فتح مکہ  پر ہٹائے گئے۔

اسلامی تعلیمات بت پرستی کو اور تصویر پرستی کو یک سر مسترد  کرتی ہے۔  اللہ  کی ایک ایسی وضاحت کردی گئی کہ بس پھر کسی  بت ،  تصویر ،یا  کسی بھی درمیانی  ذریعہ کی حاجت ہی ختم ہوگئی۔  کہہ دیا اس نے خود ہی  کہ میں تمھاری  شہہ رگ سے بھی زیادہ قریب ہوں،  پھر کہہ دیا کہ تمھارے دل میں بستا ہے۔  اب اپنے دل تک آواز پہنچانے کےلئے مجھے کس ذریعہ یا سفارش کی ضرورت ہے۔  آپ بتاؤ۔

مگر ہم مسلمان اور خاص طور پر پاکستانی بہت بڑی "چول" قوم ہیں، یا شاید عادت سے مجبور ہیں، بقول شاعر:   ع   
پیشہ آبا تھا گداگری                    راس نہ آئی پادشاہی مجھکو

ہم بت پرستی سے باز نہ  آئے اور ہم نے اینٹ پتھر ، لکڑی، سونے چاندی  کی جگہ گوشت پوس کے بت کھڑے کرلئے،   کبھی اسکو پیر صاحب کا نام دیا گیا تو کبھی ، قبر کی شکل دی گئی۔  کبھی سیاسی بت اور کبھی معاشرتی بت۔    جیسے خدا کا حکم مان لینا فرض ہے ورنہ کفر لاگو ہوا سمجھو، ایسے ہی انکا بھی ہر حکم ماننا فرض ہے ورنہ ۔ ۔ ۔  ۔۔۔     
 
 ہم کو خدا نے کہہ دیا کہ سؤر نہ کھانا مگر یہ نہ بتایا کہ کیوں، ہم نے  کھانا ترک کردیا ، اور سؤر میں ایک سو پینتیس خامیاں نکال لیں،  مانتے ہیں کہ ہر اچھائی خدا کی طرف سے ہے اور معصیت بھی۔  اکثر میت پر  سنا گیا کہ " بس جی جس کی چیز تھی اس نے واپس لے لی، وہ مالک جو ہے چاہے ہری کاٹے یا سوکھی" ۔  مطلب ہم  اعتراض کرنے والے کون جی۔  اور بابا جی بھی ہاں میں ہاں ملا رہے ہوتے  ہیں۔

مگر گوشت پوست کا ایک بڑا سا بت بنالیتے ہیں اور اسکو پوجنا شروع  کردیتے ہیں، پھر ہم اس بات سے بھی لاپرواہ ہوجاتےہیں کہ وہ کچھ غلط کہہ رہا ہے کہ  درست مگر ہم اس میں سے خود ہی  "لاجک" تلاش کرلیتےہیں اور اپنے آپ کو حقدار ثواب  قرار دے لیتےہیں۔  


مکمل تحریر  »

اتوار, ستمبر 23, 2012

اٹلی جن اور قصائی

گزشتہ ہفتے ہمارے ادھر سول ہسپتا ل کے شعبہ نفسیات جسے پنجابی میں سائیکالوجی کہاجاتا ہے کی طرف سے ایک " کیارہ "  نامی خاتون کی کال آئی کہ  " ڈاکٹر جی ،  ہمارے لئے ٹائم نکالو، آپ کی مشاورت کی ضرورت الشدید ہے وہ بھی بہت ارجنٹ" ۔  ہیں جی ؟ ،  ہمارا ماتھا ٹھنکا کہ ضرور کوئی پنگا ہوگا، کچھ الٹا ہی ہوگا،  ورنہ اس سے پہلے مجھے شعبہ نفسیات والوں نے کبھی نہیں بلایا۔

ادھر  پہنچا تو  ڈاکٹر کیارہ  جو سائیکٹریک ہیں اور سوشل سائیکولوجی میں ماہر ہیں،  میرا انتظار کررہی تھیں،  بچاری بہت مشکور ہوئیں کہ  میں  نے اپنے قیمتی وقت سے " ٹائم " نکالا ہے، دو چار بار تو میں نے" کوئی گل نہیں "  کہہ کر بات آئی گئی کردی مگر اسکے بعد صرف سر کھجا کررہ جاتا۔بعد از طویل تمہید و بیان سیاق وسباق کے ،   انہوں نے آمدبر مطلب کے مصداق  جو کچھ بتایا اس کا خلاصہ بیان کردیتا ہوں اور اس کہانی کے نتیجہ قارئین پر چھوڑتا ہوں۔ تو سنئے  ڈاکٹر کیارہ  کی زبانی۔


گزشتہ  ہفتے ہمارے پاس ایمرجنسی میں  ایک پاکستانی آیا ہے جس کی کچھ سمجھ نہیں آرہی، اس کی عمر چالیس برس ہے ، چھوٹی چھوٹی ترشی ہوئی داھڑی رکھی ہوئی ہے، سر پر ٹوپی مخصوص قسم کی  گول شکل کی، جس کے سامنے ایک کٹ سا ہے۔ کپٹرے پاکستانی شلوار قمیض، وہ بھی کچھ ایویں سا ہی۔ جسمانی طور پر کمزور، مگر لگتا ہے کبھی کافی بھرے جسم کا مالک رہا  ہوگا۔ کہتا ہے کہ اس پر جن آتے ہیں اور اسے تنگ کرتے ہیں،  اسکا نام محمد مالک  میر ہے،   تعلیمی لحاظ سے کچھ خاص پڑھا لکھا نہیں ہے،  شاید اپنے دستخط کرلیتاہے، ادھر اٹلی میں عرصہ دراز سے کوئی بیس برس سے مقیم ہے ، اطالوی زبان پر 
مناسب دسترس رکھتا ہےمطلب بات سمجھ سمجھا لیتا ہے۔  ہیں جی۔

میرے پوچھنے پر اس نے بتا یا کہ  " اسکا تعلق پاکستان کے شہر گجرات سے ہے، والد اسکا قصائی کا کام کرتا تھا، سات بہن  بھائیوں میں سے پانچویں نمبر پر ہے،  اسکے تین بچے ہیں جو پاکستان میں ہی ہیں  اور یہ کہ گزشتہ چھ برس سے ادھر بے روزگار ہے۔ پانچ برس سے پاکستان نہیں گیا، مطلب اپنے اہل خانہ سے دور ہے، پہلے اسکے پاس اپنا کرایہ کا فلیٹ تھا جو چھوٹ گیا،  ابھی اسکے پاس باقاعدہ رہائش بھی نہیں اور اپنے کسی گھمن نامی  خاص دوست کے ہاں رہتا ہے جو اس سے  کرایہ بھی نہیں لیتا۔ یہ گھمن جی آج تک  اسکا ہسپتال میں پتا کرنے نہیں آئے۔ 

جن کے آنے کے بارے اس نے بتایا کہ کہ میر جی کا کہنا ہے کہ " میں نے ایک بار ایک پاک جگہ پر پیشاب کردیا تھا جس کی وجہ سے جن مجھے چمٹ گئے ہیں اور ا ب تنگ کر رہے ہیں۔  مزید تحقیق پر معلوم ہوا کہ یہ پیشاب کرنے والا واقعہ  اس وقت کا ہے جب وہ پاکستان میں تھا۔ مطلب کوئی بیس برس قدیم یا شاید اس سے بھی زیادہ،  ابھی وہ نماز پڑھنے کی کوشش کرتا ہے مگر نہیں پڑھ سکتا ۔

ڈاکٹر کیارہ  کچھ یوں گویا ہوئیں "  ہم  نے آپ کے بارے بہت سنا ڈاکٹر جی،  کہ معالج بھی ہو اور پھر ثقافتی ثالث بھی ہو، آ پ نے نفسیات بھی پڑھی ہوگی۔ تو آپ ہمیں پاکستانی معاشرہ کے پس منظر میں اس کیس کی حقیقت بتاؤ۔

اب میں کیا بتاؤں۔   ایک بے روزگار آدمی کو جن  نہ پڑیں تو اور کیا ہو؟ آپ بتاؤ،  اول بات پاک جگہ پر پیشاب کرنے والی تو ،  یہ بات تو واقعی ہمارے ادھر مشہور ہے، مگر میرے خیال سے یہ کچھ ایسے ہی ہے جس طرح ہندو معاشرہ میں گائے ماتا کا کردار ہے، کہ بھئی یہ جانور چونکہ دودھ دیتا ہے مکھن بھی توقحط کے دنوں میں اسے "گائے ماتا" کا لقب دیا گیا کہ تب اس کا کام " ماں" کا ہی ہوتا ہے جو کھانے کو دیتی ہے۔ پاکستان میں عام مشہور ہے کہ فلاں بندے کو جن چمٹ گیا  کہ اس نے  چلتے پانی میں پیشاب کردیا تھا، فلا ں نے درخت کے سائے نیچے بول براز کردیا تھا  اور درختوں پر جنات کا ڈیر ہ ہوتا ہے،  کچھ ایسا ہی قبرستان کے بارے مشہور ہے۔  اب  اگر سوچا جائے تو چلتا پانی ،  سایہ  اور قبرستان  ہمارے لئے کس قدر اہم ہیں اور یہ بھی کہ انکو گندگی سے پاک رکھنے کا  اس سے اچھا طریقہ اور کیا ہوسکتا تھا کہ ادھر جن کا ڈیر ہ ہو اور وہ ہر مُوت کرنے والے کو چمٹے، کم سے کم  جو یہ کچھ سن لے گا وہ ان جگہوں  پر اپنی حوائیہ ضروریہ پوری کرنے 
سےفل بٹا فل گریز کرے گا۔

کچھ سوالا ت 
۔جن پاکستا ن ادھر کیسے پہنچا، ضرور پی آئی اے  سے آیا ہوگا، ایسے صورت میں اسکی ٹکٹ کو نسی ایجنسی سے بنی اور اسکا۔خرچہ کس نےبرداشت کیا؟

یہ جن صاحب  بیس برس تک کس چیز کو اڈیکتے رہے ، صرف تب ہی کیوں  چمٹے جب یہ بندہ  بے روزگار ہوگیا، اس سے 
 پہلے چمٹتے تو انکو کچھ یورو بھی مل سکتے تھے؟

پاکستان، ہندوستان اور بنگلہ دیش میں ہی بندوں کو جن کیوں چمٹتے ہیں ، اٹالین لوگ   پر حملہ آور نہیں  ہوتے۔ اسکی وجہ؟
کبھی آپ نے سنا کہ جن کسی  سید ، چوہدری، راجپوت، پٹھان ،  و اس طرز کے گھرانوں سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو ۔ پڑے ہوں؟؟  میں نے تو نہیں سنا۔ہیں جی

 پھر یہ جنات قصائی ، نائی اور اس قبیل  کے گھرانوں سے تعلق رکھنے والے  پر ہی کیوں اکثر چڑھائی کردیتے ہیں؟؟؟ہیں جی


مکمل تحریر  »

جمعرات, اگست 23, 2012

کچھ حلال کچھ حرام


علی حسن  کا سوال:
سلام بھائی جان ۔آپ سے دو باتیں پوچھنی تھیں،آپ پڑھے لکھے ہیں، کافی عرصہ سے یورپ میں رہ رہےہیں
یہ بتائیں یہ خوراک میں حلال حرام کا کیسے خیال کیا جائے؟
چلو گوشت سے بچا جا سکتا لیکن لوگ تو کہتے ہیں دودھ تک حرام آ سکتا ہے، اب یہاں ایسٹونیا یا پولینڈ میں کیا کیا جائے اب زندہ تو رہنا ہے میں دودھ، ڈبل روٹی، میٹھے کیک وغیرہ میں بس سئور اور شراب کا دیکھ کر لے لیتا ہوں۔ میکڈونلڈ سے فش 
برگر مجبوری میں کھا لیتا ہوں لیکن ان کا تیل۔۔۔بس دل میں رہتا ہے کہ یار کیا کریں۔ کوئی مشورہ عنیایت کریں۔

ہمارا جواب:
بات حلال حرام کی ہو تو اس بارے واضع لائین موجود ہے، جس میں کسی دوجے کا نقصان کیا گیا ہو، یا اگلے کی مرضی شامل نہ ہو،  وہ مال حرام ہے، مثلاُ دوجے کی بیوی، چوری کی ہوئی مرغی،  چاہے آپ نے تکبیر دونوں پر پڑھی ہوئی ہو، دونوں حرام مطلق قرارپائیں گی۔

گوشت کو دیکھ کر لو کہ بیچنے والا مسلمان ہے اور سرٹیفیکیٹ دیتا ہے مطلب کہتا ہے " قمسیں اللہ دی اے حلال ہے  " تو آپ پر حلال ہوا، یا پھر کسی مستند کمپنی یاادارے کا سندشدہ۔   اور کیک سارے حلال ہیں، کہ حرام نشہ ہے نہ کہ میٹھا، اگر آپ الکحل کی موجودگی یا عدموجودگی پر فیصلہ کرتے ہو تو پھر دیکھ لو کہ ہر اس چیز میں الکحل موجود ہے جس میں خمیر اٹھایا جاتا ہے، مثلاُ آپ کے بند، نان،  خمیری روٹی وغیرہ ،  پھر حکم ہے کہ شراب کا ذخیرہ کرنا بھی حرام ہے  مگر سرکہ تیار کرنے کو،  واضع  رہے کہ سرکہ شراب سے ہی کشید کیا جاتا ہے مگر اسکے حلال ہونے میں کسی کو کوئی شک نہیں۔ پس آپ کیک ، بروش اور اس قبیل کی دیگر ماقولات سے حظ اٹھاسکتے ہیں جب تک ان پر اینیمل فیٹ کی موجودگی کا لیبل نہ ہو، یورپین فوڈ ریگلولیشنز کے مطابق  اسکی موجودگی کی صورت میں اسے ظاہر کرنا لازم ہے، پس برانڈڈ مال ، مال حلال ہوا اور مقامی طور پر تیار کیا گیا مال مشکوک ، کہ کون جانے کس  جانور کی چربی ہے۔
لہذاحتٰی المقدور دوررہا جائے۔

فش برگر  پر گزرہ کرنے والے اسکے  تیل کے بارے میں مطمعن رہیں  کہ جو بندہ ککنگ کے بارے تھوڑا بھی جانتا ہے وہ اس بات کا بخوبی ادراک رکھتا ہے  کہ جس تیل میں مچھلی فرائی کی جاتی ہے اس میں اگر آپ کوئی اور چیز فرائی کریں تو مچھلی کی بساند آئے گی۔ آخر کوالٹی بھی کوئی چیز ہے میکڈونلڈز کےلئے، وہ کوئی پاکستانی تھوڑی ہیں کہ اسی تیل میں پکوڑے تلتے پھریں، ویسے سنا ہے کہ میک کا مال کوشر ہوتا ہے وللہ اعلم ، بہت سے پاکستانی ادھر اسی چکر میں  2 ہفتوں میں میک کھا کھا کر 10 کلو وزن بڑھالیتےہیں۔ ہم تو اسکے پاس بھی نہیں جاتے۔

پیزہ بھی لیتے وقت خاص احتیاط کیجائے کہ اس پر گوشت کسی صورت نہ ہو، نو میٹ،  خاص طور پر جب آپ اٹلی میں ہوں تو پھر آپ کے پاس ، نو میٹ کے بعد بھی بہت چوائس ہوتی ہے۔ اسکے انگریڈینٹس میں ، خمیری آٹا ، پنیر، ٹوماٹو ساس  اور مزید جو آپ کی مرضی ، لہذا مال حلال ، اگر پیسے دینے والا کوئی اور ہو توپھر پورا چسکا لو۔ ہیں جی۔

دودھ وغیر ہ کے بارے یہ کہ اگر یہ  گائے کا ہی ہوتا ہے اکثر ،  ادھر بھینس،  گدھی،  گھوڑی، بکری، سورنی کا ہوگا تو لازمی طور پر لکھا ہوگا اور اسکی قیمت بھی زیادہ ہوگی۔  ہیں جی، اب کو ئی  کم قمیت میں زیادہ قیمتی چیز کی ملاوٹ تو نہیں کرے گا۔

ویسے تومیں کچھ علم والا نہیں ہوں البتہ پڑھا لکھا ضرور ہوں، اگر آپ کو ایسا لگا تو ضرور کسی غلط فہمی کا نتیجہ ہے، البتہ ایک عام بندےکے طور پراپنا  تجربہ تحریر کردیا ، اگر کوئ صاحب اس کو فتویٰ سمجھیں تو  ایسی کوئ بات نہیں ،  اگر کوئی اسکو غلط ثابت کرنا چاہئیں تو بھی ضرور کریں۔ ہاں ایک بات ہے کہ بطور ایک مسلمان کے جو عرصہ دراز سے ادھر غیر مسلم معاشروں میں رہ رہا ہے ، یہی طریقہ  سروائیول کا دکھائی دیا،  باقی اللہ جو بار بار کہتا کہ میں بخشنے والا ہوں، میں معاف کرنے والا ہوں، تو وہ  پوری امید ہے کہ ہمیں بھی بخشےگا اور ہم پر بھی رحم کرےگا۔ 


صرف کھانے پینے کے علاوہ بھی بہت سے حلال حرام ہیں جن پر زیادہ توجہ دینے کی ضرورت ہے، مثلاُ سود، دوجے کا مال، دوست کے ساتھ دھوکا، فراڈ، وعدہ خلافی، جھوٹ، غیبت، تہمت وغیرہ وغیرہ۔ مگر کوئی اس طرف زیادہ بات کرنے کو تیار ہی نہیں ہے۔ ہیں جی۔  






مکمل تحریر  »

سوموار, جولائی 23, 2012

میں غلط ہوں


فقہ حنفیہ کے مطابق 22جولائی 2012 بروز اتوار افطار کے اوقات ( 2 رمضان )

کراچی میں افطار کا وقت 07:22 ہے ۔
اسلام آباد میں افطار کا وقت 07:16 ہے ۔
پشاور میں افطار کا وقت 07:23 ہے ۔
حیدر آباد میں افطار کا وقت 07:18 ہے ۔
فیصل آباد میں افطار کا وقت 07:11 ہے ۔
Inizio modulo
·          
o   
Muhammad Zohair Chohan لاہور میں سب فقہ وہابیہ سے تعلق رکھتے ہیں جو انکا کوئی ذکر نہیں؟
4 hours ago · Like
o    
Raja Iftikhar Khan مسلمانوں کے اوقات بھی بتلا دیتے تو اچھا ہوتا
4 hours ago · Like

Muhammad Zohair Chohan ^ مسلمانوں کو خود پتہ ہونے چاہیں۔
4 hours ago · Like
o    
Raja Iftikhar Khan اچھا فیر ٹھیک ہے
4 hours ago · Like
o 
Muhammad Zohair Chohan ویسے تو پوری دنیا میں دو ہی فقہ کے مطابق سحر و افطار کیا جاتا ہے، فقہ حنفیہ اور فقہ جعفریہ۔ لیکن پاکستان میں آج کل فقہ وہابیہ بھی شروع ہوگیا ہے جو سحری کے وقت 5 منٹ لیٹ اور افطاری 5 منٹ پہلے کرتے ہیں۔ (ذراع)
4 hours ago · Edited · Like
o    
Raja Iftikhar Khan پھر تو کچھ اور فرقے بھی ہونگے فرقہ کھتریہ، پھر یہ لا تفرقو کا کیا ہوا، بھائی جی یہ بھی بتا دو کہ سورج کا طلوع و غروب کونسی فقہ کے مطابق ہے، پھر ہم اسی کو فالو کرلیں
4 hours ago · Like
o 
Muhammad Zohair Chohan فقہ اور فرقہ میں کچھ فرق ہوتا ہے۔ ذرا دھوپ کا چشمہ اتار لیں حاجی صاحب۔
3 hours ago · Like
o    
Raja Iftikhar Khan میرا تو خیال ہے کہ دونوں کا مقصد آج تک تفرقہ ڈالنا ہی رہا ہے، یا حاج، ورنہ سوکھا کام وقت آغاز سحر و غروب آفتاب لکھ دو، ایک منٹ بعد روزہ افطار کرلو، ویسے نبی پاک اور صحابہ کونسی فقہ کے مطابق روزہ کھولتے تھے
3 hours ago · Like
o    
یعنی کہ آپ کو اعتراض اس بات پر ہے کہ حنفیہ نہ لکھا جائے؟ اگر آپ کو اتنی چڑ ہے تو جناب آپ اپنی مرضی سے سحر و افطار کر لیں کوئی زبردستی تو آپ کو کہا نہیں جارہا نہ؟ آپ چاہیے دن چڑھے سحری کر لیں یا آدھی رات کو افطار یہ آپ کا پرابلم ہے۔ ویسے آج کل کے دور میں تو وہ لوگ زیادہ تفرقہ ڈال رہے ہیں جو بظاہر الاپتے رہتے ہیں کہ تفرقہ نہ ڈالو وغیرہ وغیرہ۔

ابھی آپ نے بڑی ہوشیاری سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور صحابہ کو الگ پارٹی اور امام ابو حنیفہ اور انکے پیروکاران کو الگ پارٹی ثابت کرنے کی ناکام کوشش کر ڈالی۔ آپ کے سوال کا جواب یہ ہے کہ امام اعظم فرماتے ہیں :

میں سب سے پہلے کسی مسئلے کا حکم کتاب اﷲ سے اخذ کرتا ہوں، پھر اگر وہاں وہ مسئلہ نہ پاؤں تو سنتِ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے لے لیتا ہوں، جب وہاں بھی نہ پاؤں تو صحابہ کرام رضی اللہ عنھم کے اقوال میں سے کسی کا قول مان لیتا ہوں اور ان کا قول چھوڑ کر دوسروں کا قول نہیں لیتا اور جب معاملہ ابراہیم شعبی، ابن سیرین اور عطاء پر آجائے تو یہ لوگ بھی مجتہد تھے اور اس وقت میں بھی ان لوگوں کی طرح اجتہاد کرتا ہوں۔
o    
Raja Iftikhar Khan یہ آپ نے تہترواں فرقہ بنا دیا، بھائی جی جب بات اللہ اور اللہ کے رسول کی ہورہی ہوتو باقی سب دلائل اور حوالے بے معنی اور ہیچ لگتے ہیں جو انکے مطابق ہے وہ تو ٹھیک ہےاور جو انکے مطابق نہیں ہے وہ ٹھیک نہیں ہے، جب حکم ہوگیا کہ بھئی سحر طلوع ہونے پر سحری بند اور سورج غروب ہونے پر روزہ افطار، اب اس کو کونسا مسلک دو گے آپ یا پھر کونسا فرقہ بناؤ گے، مجھے ہر اس نام پر اعتراض ہے جو اللہ اور اللہ کے رسول کے بعد آئے اور تفرقہ کا باعث بنے۔ بلکل ایسے ہی جیسے ترجمہ کے ساتھ قرآن پڑرہے ہو تو مترجم صاحب حاشیہ کے بیچ اپنا لقمہ دیتے ہیں گویا اللہ کو نعوذ باللہ بات سمجھانے کو اس لقمہ کی ضرورت تھی۔ جب ہر بات کا ماخذ ہی قرآن و حدیث ہے تو پھر ان پر رجوع کریں، ادھر منٹوں اور سیکنڈو ں کا نہیں کہیں ذکر نہیں، اگر کسی کا روزہ ایک ادھ منٹ کے فرق 
سے بھی کھل جاتا ہے تو اس کا فرقہ بننا عجب داستان ہے۔

یہ فیس بک پر ہونے والی ایک گفتگو کا احوال ہے جو فرقہ بندی پر ختم ہوئی،  
کبھی پانی پینے پلانے پر جھگڑا ،          کبھی کتا نہلانے پر جھگڑا
آج روزہ کھولنے کھلوانے پر جھگڑا ،  کل مسلا کہلوانے پر جھگڑا

میرا سوال پھر یہی رہا کہ کیا اللہ میاں روزے کے بارے ، اسکی نیت کے بارے   دلچسپی رکھتے ہیں کہ جو فلاں امام صاحب نے اور فلاں حضرت صاحب نے، کہا اس میں ، جب حکم آگیا کہ آج کے دن دین مکمل ہوا اور نعمت تمام ہوئ، تو ہم لوگ کیوں دین میں چیزوں کو شامل کرکرکے کفران نعمت کرنے پر تلے ہوئے ہیں،
مگر نہیں لگتا میری ہی مت ماری گئی ہے، میں ہی غلط ہوں، مگر پھر وہ کیا ہو ا اس حکم کہ اللہ کی رسی کو مضبوطی سے تھام لو اور آپس میں تفرقہ مت کر،
پر مجھے تو لگتا ہے کہ ادھر ہر کوئی اپنے والی رسی پھڑے ہوئے گھوم رہا ہے، 
 نہیں نہیں ایسا نہیں ہوسکتا ، ایک میں ہی تو نہیں ایک سیانہ  پوری دنیا میں  اور باقی سارے پاگل ہیں، نہیں جی ایسا کیسے ہوسکتا ہے، بس میری ہی مت وجی ہوئی ہے۔ کوئی رسی ہی پھڑا دو ساہنوں وی۔ ۔
Fine modulo


Fine modulo

مکمل تحریر  »

جملہ حقوق بنام ڈاکٹر افتخار راجہ. تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.

اس بلاگ میں تلاش