منگل, نومبر 21, 2006

قیدی عورتیں

پیر کو مقامی اسکول میں ”غیر ملکی بچوں کے مسائل اور انکے ممکنہ حل ” کے مسئلہ پر ایک میٹنگ تھی، جسکو مرحوم علامہ مضطرعباسی ”جلسہ” کہا کرتے تھے۔ اس جلسہ میں اساتذہ، ماہرین لسانیات، سماجی کارکنان اور بچوں کے والدین شامل تھے میری موجودگی بطور غیرملکیوں کے امور کے ماہر اور لسانی مددگار کے تھی۔ مختلف قسم کے مسائل سامنے آئے جن میں طلباء کا اسکول لیٹ آنا، اسکول کی طرف سے دیے گئے ہوم ورک کو نہ کرنا، ہم جماعتوں سے لڑائی جھگڑا کرنا، اسکولوں کے طلباء کے درمیان پیدا ہونے والی فطری لسانی گروہ بندی، والدین کا بچوں کا خیال نہ رکھنا، والدین اور اسکول کے درمیان روابط کی کمی اور اسی طرح کے دیگر مسائل جن میں سے کچھ والدین کی طرف سے کیئے گئے تھے اور کچھ اسکول کی طرف سے۔ پھر بات چل نکلی کہ پاکستانی بچوں کی مائیں اسکول میں کم ہی آتی ہیں اور یہ کہ ان میں سے بہت کم تعداد میں زبان جانتی ہیں وغیرہ وغیرہ۔
کافی کے وقفہ کے دوران ایک پروفیسر لوچیا نامی کافی کا کپ پکڑے میرے پاس آ کھڑی ہوئی اور پوچھنے لگی کہ میں نے سنا ہے کہ تمھاری پاکستانی عورتیں یہاں پر بہت زیادہ ڈیپریشن کا شکار ہیں مجھے یہ معلوم ہوا کہ تم اپنی عورتوں کو چھ چھ ماہ گھر سے نکلنے کی اجازت تک نہیں دیتے اور یہ کہ وہ سارا دن اکیلی گھر میں رہ رہ کر پریشان ہوتی رہتی ہیں۔ اب چونکہ بات ساری پاکستانی قوم کی ہورہی تھی تو میں نے کہہ دیا کہ نہیں ایسی بھی کوئی بات نہیں، ہاں البتہ کوئی اکا دکا کیس اس نوعیت کا ہوسکتا ہے۔ مطلب اپنا آپ صاف بچا لیا۔ مگر بعد میں جب اپنے اردگرد رہنے والے خاندانوں پر نظر دوڑائی تو محسوس ہوا کہ یہ تو شاید ستر فیصد خاندانوں کا مسئلہ بن چکا ہے۔ یہاں اٹلی میں ”ولاز” بہت کم ہیں جبکہ اکثریت دو بیڈرومز کے اپارٹمنٹ میں رہتی ہے۔ اب تین کمرے، کچن اور باتھ روم پر سترمکعب میٹر کا فلیٹ ہے اور میاں صبح چھ بجے ڈیوٹی کےلئے نکل لیئے، بچے ساتھ بجے اسکول کےلئے اب ماں اکیلی گھر میں کیا صفائی کرے گی اور کیسے وقت گزارے گی۔ گھر سے باہر اسکو نہیں جانا ہے اور گھر کے اندر کرنے کو سارا دن کچھ نہیں، ہمسایئے کے گھر نہیں جانا کہ اول تو لسانی آڑ اور پھر انکو غیر مذہب سمجھ کر قابل نفرت سمجھنا۔ اب آجا ے یا ٹی وی یا پھر سرکا درد۔
ہمارے دوست جمال بھائی بڑے مذہبی ہیں اور ہمارے گھر کے نذدیک ہی رہتے ہیں اگلے دن ان سے کوئی کام تھا تو شام کے بعد جا انکے گھر کی گھنٹی بجائی، کافی دیر کے بعد جواب نہ موصول ہوا۔ تو واپس نکل آیا ، دیکھتا ہوں کہ آگے سے جمال بھائی آرہے ہیں اور انکے چند قدم پیچھے بھابھی بھی۔ مجھے دیکھ کر وہ رکے اور بھابھی دس قدم پیچھے ہی سائیڈ میں کھڑی ہوگیں گویا انہوں نے مجھے دیکھا ہی نہیں۔ خیر سلام دعا کے بعد میں نے پوچھا کہ کدھر گئے ہوئے تھے؟ تو کہنے لگے اصل میں تمھاری بھابھی کو لے کر باہر نکل گیا تھا کہ تین چار ہفتوں سے باہر نہیں نکلی اور سردرد کی شکائیت کرتی تھی۔ میں نے کہا کہ اب اندھیرا ہوگیا اور چلو تمھیں گھما پھرا لاؤں۔
مجھے اس بات کی آج تک سمجھ نہیں آئی کہ یہ رویے ہم نے کیسے اپنا لیے ہیں کہ پاکستان میں تو یہی بیبیاں کھیتوں میں کام بھی کرتی ہیں اور گھروں کی سبزی سودا بھی لے آتی ہیں شادی ہوتو انکو روز شاپنگاں کرنی ہوتی ہیں جبکہ ادھر آتے ہی بیبی حاجن کا روپ دھار لیتی ہیں ہیں یا مجبور کردی جاتی ہیں۔ ایسا کیوں ہے؟ اپکو معلوم ہوتو مجھے بھی بتائیے گا۔

5 تبصرے:

  • میرا پاکستان says:
    11/21/2006 10:52:00 PM

    راجہ صاحب
    ادھر کینیڈا اور امریکہ میں تو ایسی بات نظر نہیں آئی اور اگر ہے تو پھر بہت کم یعنی ہوسکتا ہے بہت ہی کٹڑ مزہبی لوگ اس طرح کرتے ہوں۔ ویسے دیکھا یہ گیا ہے کہ مردوں کی طرف سے پابندی کم ہوتی ہے اور ہماری عورتیں شرمیلی زیادہ ہوتی ہیں اسی لۓ وہ باہر بہت کم نکلتی ہیں۔ جس عورت ميں شرمیلا پن کم اور خود اعتمادی زیادہ ہو وہ تو باہر کے سارے کام بناں زبان جانے کرکے آتی ہے۔
    ہاں البتہ یہ بات سچ ہے کہ ہم لوگ بچوں کے سکول نہیں جاتے اور نہ ہی ٹیچروں سے بچوں کا حال پوچھتے ہیں۔
    ہمارے تجربے کی روشنی میں یورپ میں ہمیں سب سے بڑا خطرہ اپنے بچوں کی مناسب دیکھ بھال نہ کرنے کا ہے۔

  • Shoiab Safdar says:
    11/22/2006 07:26:00 AM

    یہ قابل توجہ معاملہ ہے!!!

  • زکریا says:
    11/22/2006 03:43:00 PM

    کچھ سال پہلے کی بات ہے کہ ہم نیو جرسی میں اپارٹمنٹ میں رہتے تھے۔ اچھا مہنگا علاقہ تھا اور وہاں رہنے والے زیادہ تر پروفیشنل تھے۔ ایک دن میری بیوی گھر سے نکلی تو سامنے والی بلڈنگ والی بنگالی خاتون کچھ پریشان بھگتی پھر رہی ہیں۔ نہ انہیں انگریزی یا اردو آتی تھی نہ ہمیں بنگالی۔ بڑی مشکل سے یہ پتہ چلا کہ ان کے کچن میں کھانا پکاتے آگ لگ گئی ہے۔ مگر خاتون کو کچھ پتہ نہ تھا کہ کیا کریں۔ میری بیوی نے 911 کال کی تاکہ کوئی آ کر بھجا جائے اس سے پہلے کہ باقی بلڈنگ بھی جل جائے۔

    ان بنگالی فیملی کو وہاں رہتے ایک دو سال ہو چکے تھے مگر انہیں ایمرجنسی بھی ہینڈل کرنا نہیں پتہ تھا۔

  • گمنام says:
    12/04/2006 06:06:00 PM

    Asslamo alikum w/r w/b ,

    ye italy ,usa aur canda ki baat nahi hay , ghar main rehnay ki taleem hamray haan aurat ki ghati main hoti hay ,us ki wajah sirf islam nahi hay , muashray ki bigrati halat hay aur aap yaqeen karain ya na karain sirf musalman aurat hi nahi , dunya bhar kay kisi bhi khitay ki ba shaoor aurat ghar ko gosha-e- afiyat samjhti hay, bhalay hi wo kitni bhi "independent " ho ,aur bhalay hi wo ghar main ziada na rehti ho . yahan aap say aik sawal hay ke , aap khud un mardon main say to nahi hain jo rastay say guzarnay wali her aurat ko tanqeedi nazroon say daikhna apna awaleen haq samjhtay hain?

    ager hain to phir samjhyay ke aap ko jawab mil gaia . to goia ghar main rehnay ki pehli wajah apni ezzat-o- esmat ki hifazat hay.

    aagay chaltay hain , doctor sahab nay italy ki baat ki hay , Pakistan main aurat kaafi azadana ghoomti phirti hay aajkal laikin sirf bazaroon ki had tak , bachoon kay school janay wali 100 main aik khatoon ho gi , jisay taleem ki ehmiyat ka andaza ho ga, aur wo saat pardon main bhi ye kaam karay gi . to baat sirf ghar main qaid honay ki nahi apni zehni satah ki bhi hay . to buhut kam pakistani maein hain jo apnay bachoon kay liyay pehli ehmiyat taleem samjhti hain , ziada ter ka rona sirf bachay kay liyay achi say achi asaish ka hona hay.

    agay aap nay baat ki ghair mulk kay hawalay say , to asaan si baat hay jab tak kisi jagah main rehnay kay rang dhang ka elm na ho wahan rehna ya wahan ki mushkilaat say deal karna mumkin nahi hota . aur ye to sab jantay hi hain ke maghrib kay mumalik ka tasawur aurat kay baray hum say farq hay , aur ye baat theek hay ke kisi jagah ki zubaan say na shanaey khud aetemadi paida karti hay , mairi aik italian Pakistani dost nay hi aik baar bataia tha ke italy main language ka masla rehta hay . bilkul germany ki tarha , baqiada seekhni hoti hay zubaan , jo ke time taking baat hay.aur yahan ye baat lagoo hoti hay ke apni gali main to kutta bhi shair hota hay ....to apnay mulk main halat kaisay bhi hoon wo apna hota hay....

    Aap nay baat ki aik deeni insaan ki , to doctor sahab ager koey khawand apni bivi ko tahaffuz daita hay to is main aap ka kia jata hay.aur is main kaey aur bhi wujoohaat hain, aap ka dheyaan shaid wahan tak nahi gaia ,aik to ye ke shadi kay baad ki zindigi mukhtalif hoti hay , doosra ye ke shadi honay kay baad bahir aa jana aurat ka , ye sab hamray haan kisi planning kay tehat nahi hota , pehlay to aurat ko pata nhi hota ke us nay italy jana hay to kanwaray pan say hi wahan ki tayaari karay , aur yehi hala mard ka hay wo bhi anay wali bivi kay liyay kuch plan nahi karta , balkeh sab kuch halaat pe depend hota hay.kaey admyon ko bhi nahi pata hota ke jis say wo shadi kar raha hay wo mulk say bahir aa kay kaisay reh paey gi? aur reh paey gi bhi ke nahi? is muamlay main kabhi na koey baat hoti hay na is ka hal kisi nay socha hota hay.

    to nateejatan , asmaan say gira khajoor pe atkay walai baat ho jati hay . yahan aik baat aur qabil-e- ghaur hay ke aurat ki apni choice bhi hoti hay ghar main rehnay ki .kioon?

    kionkeh maazi main wo bahir anay janay , aur kaam karnay ka tajarba kar kay daikh chuki hoti hay . Aap ko jaan kay hairat ho gi ke Paksitan main bahir anay janay her kaam karnay waali aurat , zindigi main kisi na kisi waqt , kisi na kisi tarha kam ya ziada , abusive rawayay ka shikaar hoti hay.aur wo ainda usi hisaab say apnay tahaffuz ka khiyal karti hay, apna mulk ho ya ghair mulk us kay liyay bahir ki dunya main koey ziada farq nahi .

    baaqi reh gaey baat un mardon ki jo" zaroorat "pe bhi aurat ko ghar say nikalnay ki ijazet nahi daitay , to aisay log waisay aaj kal buhut hi kam hain, laikin wo aisa kioon kartay hain ye to aap bakhoobi jantay hoon gay .

  • Al Sunna says:
    11/24/2009 07:07:00 AM

    Assalamu alaikum,

    Nice blog, the content in this blog is very useful to the people who are looking out for islamic knowledge.

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ اس موضوع پر کوئی رائے رکھتے ہیں، حق میں یا محالفت میں تو ضرور لکھیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔


جملہ حقوق بنام ڈاکٹر افتخار راجہ. تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.

اس بلاگ میں تلاش